Facebook Facebook Facebook Facebook

Categories

ایوان بالا: تنخواہ بڑھانے پر سینیٹرز کا وزیر خزانہ سے اظہار تشکر

Posted by
Published: November 25, 2016 05:59 pm

اسلام آباد ،25 نومبر 2016 :ایوان بالا کے 255 ویں اجلاس کی چھٹی نشست میں ایوان نے نظام کار پر موجود ایک قانونی مسودے کی منظوری دی ، علاوہ ازیں ایک قرارداد بھی منظور کی گئی جس میں سینیٹرز کی تنخواہیں بڑھانے پر وزیر خزانہ کا شکریہ ادا کیا گیا ۔

خاص نکات

  • نشست کا دورانیہ 02گھنٹے 50 منٹ رہا ۔
  • نشست کا آغاز طے شدہ وقت 10 بجے  صبح کی بجائے دو منٹ تاخیر سے ہوا ۔
  • چیئرمین  نے  01 گھنٹہ 38 منٹ تک نشست کی صدارت کی، بقیہ کارروائی کی صدارت پینل آف چیئر پرسنز کے ایک رکن نے انجام دی ۔
  • ڈپٹی چیئرمین موجودتھے ۔
  • وزیر اعظم شریک نہ ہوئے ۔
  • قائد ایوان نے02گھنٹے 22منٹ جبکہ قائد حزب اختلاف  نے 48 منٹ ایوان میں گزارے ۔
  • نشست کا آغاز  07(06فیصد )  جبکہ اختتام  25(24فیصد( سینیٹرز کی موجودگی کیساتھ ہوا  ۔
  • پاکستان پیپلز پارٹی ، پاکستان مسلم لیگ (ن) ، مسلم لیگ فنکشنل ، پختونخوا ملی عوامی پارٹی اور متحدہ قومی موومنٹ اور تحریک انصاف  کے پارلیمانی قائدین نے شرکت کی
  • دواقلیتی سینیٹر بھی شریک ہوئے۔

کارکردگی

  • ایوان نے فوجداری قوانین ( ترمیمی) بل 2016 کی منظوری دی ، اس قبل بل پر مجلس قائمہ نے رپورٹ پیش کی اور ایک غیر متعلقہ شق کو حذف کیا گیا ۔
  • پاکستان پیپلز پارٹی کے ایک رکن نے سینیٹرز کی تنخواہیں بڑھانے پر وزیر کزانہ کے اظہار تشکر کی قرارداد پیش کی جسے منظور کیا گیا ۔
  • خزانہ پر قائم مجلس قائمہ کے چیئرمین نے کمپنیز ( قانونی مشیروں کے تقرر ) (ترمیمی) بل 2016 پر مجلس کی رپورٹ پیش کی ۔
  • ایوان نے قانون و انصاف پر قائم مجلس قائمہ کے چیئرمین کی طرف سے پیش مجلس کی رپورٹ کی منظوری دی ۔ یہ رپورٹ 10 نومبر 2015 کو مجلس کے سپرد معاملے پر تھی جس میں بلڈنگ کوڈ خاص طور پر زلزلہ کے پس منظر میں تعمیراتی کیلئے متعارف دفعات سے متعلق تھی جن میں تعمیراتی ضابطے کی خلاف ورزی کرنیوالوں کو سزائیں وغیرہ دینے کے طریق کار کا معاملہ اٹھایا گیا تھا ۔
  • ایوان نے جنوبی وزیرستان میں صحت اور تعلیم کی سہولتوں جنہیں فاٹا اور اے ڈی پی کی امبریلا سکیموں سے حذف کیا گیا تھا سے متعلق ریاستوں اور سرحدی علاقوں پر قائم مجلس قائمہ کی رپورٹ منظور کی ۔

نمائندگی اور جوابدہی

  • ایوان نے پاک ترک سکولوں کے  ترک اساتذہ  اور عملے  کے ویزوں کی منسوخی اور چشمہ ژوب ٹرانسمشن لائن منصوبے کی منظوری کے باوجود منصوبے پر کام شروع نہ ہونے سے متعلق دو الگ الگ توجہ دلاؤأ نوٹس اٹھائے ۔
  • ایوان مختلف مجالس ہائے قائمہ کے پاس موجود معاملات پر رپورٹس پیش کرنیکی مدت میں مزید توسیع کیلئے دو تحاریک زیر ضابطہ 194(1) کی منظوری دی ۔
  • نظام ہائے کار پر موجود 53 نشان زدہ سوالات میں سے 15 سوالات اٹھائےگئے ، سینیٹرز نے 30 ضمنی سوال بھی دریافت کئے ۔

نظم و ضبط

  • عوامی اہمیت کے 11 نکات پر 15 منٹ بات کی گئی  ۔
  • وزیر مملکت داخلہ کی طرف سے پاک ترک سکولوں کے اساتذہ اور عملے کے ویزے منسوخ کرنے سے متعلق سوال کا اطمینان بخش جواب نہ ملنے پر حزب اختلاف کے چند سینیٹرز نے سات منٹ کیلئے ایوان سے واک آؤٹ کیا ۔

شفافیت

  • ایجنڈے کی نقول تمام اراکین ، مشاہدہ کاروں اور عوام کیلئے دستیاب تھیں ۔
  • اراکین کی حاضری کی تفصیل ایوان کی ویب سائٹ پر دستیاب پائی  گئی۔

 

(یہ فیکٹ شیٹ فری اینڈ فئیر الیکشن نیٹ ورک کی جانب سے  ایوان بالا  کی کاروائی کے براہ راست مشاہدے پر مبنی ہے۔ ادارہ ممکنہ غلطی  یا کوتاہی پر پیشگی معذرت خواہ ہے

Posted by on November 25, 2016. Filed under سینیٹ. You can follow any responses to this entry through the RSS 2.0. Both comments and pings are currently closed.